Surah Fatir

Irfan-ul-Quran
  • 22پارہ نمبر
  • 45آيات
  • 5رکوع
  • 43ترتيب نزولي
  • 35ترتيب تلاوت
  • مکیسورہ

Read Surah Fatir with English & Urdu translations of the Holy Quran online by Shaykh ul Islam Dr. Muhammad Tahir ul Qadri. It is the 35th Surah in the Quran Pak with 45 verses. The surah's position in the Quran Majeed in Juz 22 and it is called Makki Surah of Quran Karim. You can listen to audio with Urdu translation of Irfan ul Quran in the voice of Tasleem Ahmed Sabri.

or

اللہ کے نام سے شروع جو نہایت مہربان ہمیشہ رحم فرمانے والا ہے

In the Name of Allah, the Most Compassionate, the Ever-Merciful

وَ مَا یَسۡتَوِی الۡبَحۡرٰنِ ٭ۖ ہٰذَا عَذۡبٌ فُرَاتٌ سَآئِغٌ شَرَابُہٗ وَ ہٰذَا مِلۡحٌ اُجَاجٌ ؕ وَ مِنۡ کُلٍّ تَاۡکُلُوۡنَ لَحۡمًا طَرِیًّا وَّ تَسۡتَخۡرِجُوۡنَ حِلۡیَۃً تَلۡبَسُوۡنَہَا ۚ وَ تَرَی الۡفُلۡکَ فِیۡہِ مَوَاخِرَ لِتَبۡتَغُوۡا مِنۡ فَضۡلِہٖ وَ لَعَلَّکُمۡ تَشۡکُرُوۡنَ ﴿۱۲﴾

12. اور دو سمندر (یا دریا) برابر نہیں ہو سکتے، یہ (ایک) شیریں، پیاس بجھانے والا ہے، اس کا پینا خوشگوار ہے اور یہ (دوسرا) کھاری، سخت کڑوا ہے، اور تم ہر ایک سے تازہ گوشت کھاتے ہو، اور زیور (جن میں موتی، مرجان اور مونگے وغیرہ سب شامل ہیں) نکالتے ہو، جنہیں تم پہنتے ہو اور تُو اس میں کشتیوں (اور جہازوں) کو دیکھتا ہے جو (پانی کو) پھاڑتے چلے جاتے ہیں تاکہ تم (بحری تجارت کے راستوں سے) اس کا فضل تلاش کر سکو اور تاکہ تم شکرگزار ہو جاؤo

12. And two seas (or rivers) cannot be the same: this (one) is sweet, thirst-quenching and pleasant to drink and that (other) is salty and very bitter. And you eat fresh meat from each and bring forth ornaments (including pearls and corals) that you wear. And you see in them boats (and ships) that cleave through (the water), so that you may seek His bounty (through marine trade routes) and that you may become grateful.

(فَاطِر، 35 : 12)

وَ لَا تَزِرُ وَازِرَۃٌ وِّزۡرَ اُخۡرٰی ؕ وَ اِنۡ تَدۡعُ مُثۡقَلَۃٌ اِلٰی حِمۡلِہَا لَا یُحۡمَلۡ مِنۡہُ شَیۡءٌ وَّ لَوۡ کَانَ ذَا قُرۡبٰی ؕ اِنَّمَا تُنۡذِرُ الَّذِیۡنَ یَخۡشَوۡنَ رَبَّہُمۡ بِالۡغَیۡبِ وَ اَقَامُوا الصَّلٰوۃَ ؕ وَ مَنۡ تَزَکّٰی فَاِنَّمَا یَتَزَکّٰی لِنَفۡسِہٖ ؕ وَ اِلَی اللّٰہِ الۡمَصِیۡرُ ﴿۱۸﴾

18. اور کوئی بوجھ اٹھانے والا دوسرے کا بارِ (گناہ) نہ اٹھا سکے گا، اور کوئی بوجھ میں دبا ہوا (دوسرے کو) اپنا بوجھ بٹانے کے لئے بلائے گا تو اس سے کچھ بھی بوجھ نہ اٹھایا جا سکے گا خواہ قریبی رشتہ دار ہی ہو، (اے حبیب!) آپ ان ہی لوگوں کو ڈر سناتے ہیں جو اپنے رب سے بن دیکھے ڈرتے ہیں اور نماز قائم کرتے ہیں، اور جو کوئی پاکیزگی حاصل کرتا ہے وہ اپنے ہی فائدہ کے لئے پاک ہوتا ہے، اور اللہ ہی کی طرف پلٹ کر جانا ہےo

18. And no bearer of burden will bear another’s burden (of sins). And if someone heavily loaded calls (another) to share his load, nothing of his burden will be carried by him even though he be a close relative. (O Beloved!) You warn but those who fear their Lord unseen and establish Prayer. And whoever acquires purity does so to his own benefit. And to Allah is the return.

(فَاطِر، 35 : 18)

وَ مَا یَسۡتَوِی الۡاَحۡیَآءُ وَ لَا الۡاَمۡوَاتُ ؕ اِنَّ اللّٰہَ یُسۡمِعُ مَنۡ یَّشَآءُ ۚ وَ مَاۤ اَنۡتَ بِمُسۡمِعٍ مَّنۡ فِی الۡقُبُوۡرِ ﴿۲۲﴾

22. اور نہ زندہ لوگ اور نہ مُردے برابر ہو سکتے ہیں، بیشک اللہ جسے چاہتا ہے سنا دیتا ہے، اور آپ کے ذِمّے اُن کو سنانا نہیں جو قبروں میں (مدفون مُردوں کی مانند) ہیں (یعنی آپ کافروں سے اپنی بات قبول کروانے کے ذمّہ دار نہیں ہیں)٭o

٭ یہاں پر مَنْ فِي الْقُبُوْرِ (قبروں میں مدفون مُردوں) سے مراد کافر ہیں۔ اَئمہ تفسیر نے صحابہ و تابعین رضی اللہ عنہم سے یہی معنی بیان کیا ہے۔ بطور حوالہ ملاحظہ فرمائیں : تفسیر البغوی (3 : 569)، زاد المسیر لابن الجوزی (7 : 484)، تفسیر القرطبی (14 : 340)، تفسیر الخازن (3 : 498)، تفسیر ابن کثیر (3 : 553)، تفسیر اللباب لابی حفص الحنبلی (15 : 199، 200)، الدر المنثور للسیوطي (7 : 18)، اور فتح القدیر للشوکانی (4 : 346)

22. Nor can the living and the dead be alike. Surely, Allah makes whom He wills hear, and it is not your responsibility to make those hear who are (like those buried) in the graves* (i.e., you are not responsible to make the disbelievers accept what you say).

* Here the words man fi’l-qubur (who are [like those buried] in the graves) allude to the disbelievers. The leading exegetes have reported that the Companions and the Followers narrated the same meaning. References: Tafsir al-Baghawi (3:569); Zad al-Masir by Ibn al-Jawzi (7:484); Tafsir al-Qurtubi (14:340); Tafsir al-Khazin (3:498); Tafsir Ibn Kathir (3:553); Tafsir al-Lubab by Ibn ‘Adil al-Damashqi (15:199-200); al-Durr al-Manthur by al-Suyuti (7:18) and Fath al-Qadir by al-Shawkani (4:346).

(فَاطِر، 35 : 22)

وَ ہُمۡ یَصۡطَرِخُوۡنَ فِیۡہَا ۚ رَبَّنَاۤ اَخۡرِجۡنَا نَعۡمَلۡ صَالِحًا غَیۡرَ الَّذِیۡ کُنَّا نَعۡمَلُ ؕ اَوَ لَمۡ نُعَمِّرۡکُمۡ مَّا یَتَذَکَّرُ فِیۡہِ مَنۡ تَذَکَّرَ وَ جَآءَکُمُ النَّذِیۡرُ ؕ فَذُوۡقُوۡا فَمَا لِلظّٰلِمِیۡنَ مِنۡ نَّصِیۡرٍ ﴿٪۳۷﴾

37. اور وہ اس دوزخ میں چِلّائیں گے کہ اے ہمارے رب! ہمیں (یہاں سے) نکال دے، (اب) ہم نیک عمل کریں گے ان (اَعمال) سے مختلف جو ہم (پہلے) کیا کرتے تھے۔ (ارشاد ہوگا:) کیا ہم نے تمہیں اتنی عمر نہیں دی تھی کہ اس میں جو شخص نصیحت حاصل کرنا چاہتا، وہ سوچ سکتا تھا اور (پھر) تمہارے پاس ڈر سنانے والا بھی آچکا تھا، پس اب (عذاب کا) مزہ چکھو سو ظالموں کے لئے کوئی مددگار نہ ہوگاo

37. And they will howl in Hell: ‘O our Lord, take us out (from here). We shall (now) do righteous works different from those (works) we used to do (before).’ (Allah will say:) ‘Did We not grant you long enough life during which whoever wanted to seek advice might reflect? And (moreover) the Warner too had come to you. So savour now the taste (of the torment), and there will be no helper for the wrongdoers.

(فَاطِر، 35 : 37)